بہ حرف صورت انکار توڑ دی میں نے

شاہد کمال

بہ حرف صورت انکار توڑ دی میں نے

شاہد کمال

MORE BYشاہد کمال

    بہ حرف صورت انکار توڑ دی میں نے

    دلوں کے بیچ کی دیوار توڑ دی میں نے

    وہ بے خودی میں ترا نام لب پہ آ ہی گیا

    لو یہ قسم بھی مرے یار توڑ دی میں نے

    ترے غبار کف پا کی کج کلاہی میں

    غرور و نخوت دستار توڑ دی میں نے

    اس عاجزی سے کیا اس نے میرے سر کا سوال

    خود اپنے ہاتھ سے تلوار توڑ دی میں نے

    کچھ اس طرح سے بڑھی لذت خلش دل کی

    جگر میں درد کی سوفار توڑ دی میں نے

    صدائے نالۂ بے اختیار سے اپنے

    ترے سکوت کی رفتار توڑ دی میں نے

    مرے جسارت طرز سخن کی داد تو دے

    روایت لب و رخسار توڑ دی میں نے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY