بے تحاشہ اسے سوچا جائے

ثروت زہرا

بے تحاشہ اسے سوچا جائے

ثروت زہرا

MORE BYثروت زہرا

    بے تحاشہ اسے سوچا جائے

    زخم کو اور کریدا جائے

    جانے والے کو چلے جانا ہے

    پھر بھی رسماً ہی پکارا جائے

    ہم نے مانا کہ کبھی پی ہی نہیں

    پھر بھی خواہش کہ سنبھالا جائے

    آج تنہا نہیں جاگا جاتا

    رات کو ساتھ جگایا جائے

    حرف لکھنا ہی نہیں کافی ہے

    آؤ اب حرف مٹایا جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY