دور فلک کے شکوے گلے روزگار کے

گوپال متل

دور فلک کے شکوے گلے روزگار کے

گوپال متل

MORE BYگوپال متل

    دور فلک کے شکوے گلے روزگار کے

    ہیں مشغلے یہی دل ناکردہ کار کے

    یوں دل کو چھیڑ کر نگۂ ناز جھک گئی

    چھپ جائے کوئی جیسے کسی کو پکار کے

    سینے کو اپنے اپنا گریباں بنا کے ہم

    قائل نہیں ہیں پیرہن تار تار کے

    کیا کیجئے کشش ہے کچھ ایسی گناہ میں

    میں ورنہ یوں فریب میں آتا بہار کے

    اک دل اور اس پہ حسرت ارماں کا یہ ہجوم

    کیا کیا کرم ہیں مجھ پہ مرے کرد گار کے

    ہم کو تو روز حشر کا بھی کچھ یقیں نہیں

    کیا منتظر ہوں وعدۂ فردائے یار کے

    کس دل سے تیرا شکوۂ بیداد کر سکیں

    مارے ہوئے ہیں ہم نگۂ شرمسار کے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دور فلک کے شکوے گلے روزگار کے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY