دل کی دھڑکن اب رگ جاں کے بہت نزدیک ہے

اسلم عمادی

دل کی دھڑکن اب رگ جاں کے بہت نزدیک ہے

اسلم عمادی

MORE BYاسلم عمادی

    دل کی دھڑکن اب رگ جاں کے بہت نزدیک ہے

    رات بے آواز بے انداز بے تحریک ہے

    جم گئی ہیں تاروں کی آنکھوں پہ بادل کی تہیں

    ڈوب جاؤ ذات کے اندر فلک تاریک ہے

    کل کے لمحے آج کے لمحوں میں مدغم ہو گئے

    دیکھنا آنکھوں میں اب جلوہ نما تحریک ہے

    تم مرے کمرے کے اندر جھانکنے آئے ہو کیوں

    سو رہا ہوں چین سے ہوں ٹھیک ہے سب ٹھیک ہے

    موت کا لمحہ ابھی آیا ابھی جانے کو ہے

    چوم لو مٹی کو اپنی ہدیۂ تبریک ہے

    دوستو آنکھیں نہ کھولو ٹھنڈی سانسیں مت بھرو

    آ گئے منزل پہ تم اسلمؔ بہت نزدیک ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY