دن ڈھلا شب ہوئی چراغ جلے

اختر ضیائی

دن ڈھلا شب ہوئی چراغ جلے

اختر ضیائی

MORE BY اختر ضیائی

    دن ڈھلا شب ہوئی چراغ جلے

    بزم رنداں میں پھر ایاغ جلے

    دفعتاً آندھیوں نے رخ بدلا

    ناگہاں آرزو کے باغ جلے

    آس ڈوبی تو دل ہوا روشن

    بجھ گیا دل تو دل کے داغ جلے

    جل بجھے جستجو کے پروانے

    مستقل منزل سراغ جلے

    گاہ مصروفیت سلگ اٹھے

    گاہ تنہائی و فراغ جلے

    آنکھیں کرتی ہیں شبنم افشانی

    جب تری یاد میں دماغ جلے

    ان کا چہرہ تہ نقاب اخترؔ

    جیسے پردے میں اک چراغ جلے

    مآخذ:

    • کتاب : ajnabii musamo.n ki khushboo (Pg. 14)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY