احساس نا رسائی سے جس دم اداس تھا

حنیف ترین

احساس نا رسائی سے جس دم اداس تھا

حنیف ترین

MORE BY حنیف ترین

    احساس نا رسائی سے جس دم اداس تھا

    شاید وہ اس گھڑی بھی مرے آس پاس تھا

    محفل میں پھول خوشیوں کے جو بانٹتا رہا

    تنہائی میں ملا تو بہت ہی اداس تھا

    ہر زخم کہنہ وقت کے مرہم نے بھر دیا

    وہ درد بھی مٹا جو خوشی کی اساس تھا

    انگڑائی لی سحر نے تو لمحے چہک اٹھے

    جنگل میں ورنہ رات کے خوف و ہراس تھا

    سورج پہ وقت کا جو گہن لگ گیا حنیفؔ

    دیکھا تو مجھ سے سایہ مرا نا شناس تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY