ایک بھٹکے ہوئے لشکر کے سوا کچھ بھی نہیں

کاملؔ بہزادی

ایک بھٹکے ہوئے لشکر کے سوا کچھ بھی نہیں

کاملؔ بہزادی

MORE BYکاملؔ بہزادی

    ایک بھٹکے ہوئے لشکر کے سوا کچھ بھی نہیں

    زندگانی مری ٹھوکر کے سوا کچھ بھی نہیں

    آپ دامن کو ستاروں سے سجائے رکھئے

    میری قسمت میں تو پتھر کے سوا کچھ بھی نہیں

    تیرا دامن تو چھڑا لے گئے دنیا والے

    اب مرے ہاتھ میں ساغر کے سوا کچھ بھی نہیں

    میری ٹوٹی ہوئی کشتی کا خدا حافظ ہے

    دور تک گہرے سمندر کے سوا کچھ بھی نہیں

    لوگ بھوپال کی تعریف کیا کرتے ہیں

    اس نگر میں تو ترے گھر کے سوا کچھ بھی نہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ایک بھٹکے ہوئے لشکر کے سوا کچھ بھی نہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY