ایک ستم اور لاکھ ادائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

شاد عظیم آبادی

ایک ستم اور لاکھ ادائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

شاد عظیم آبادی

MORE BY شاد عظیم آبادی

    ایک ستم اور لاکھ ادائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

    ترچھی نگاہیں تنگ قبائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

    ہجر میں اپنا اور ہے عالم ابر بہاراں دیدۂ پر نم

    ضد کہ ہمیں وہ آپ بلائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

    اپنی ادا سے آپ جھجکنا اپنی ہوا سے آپ کھٹکنا

    چال میں لغزش منہ پہ حیائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

    ہاتھ میں آڑی تیغ پکڑنا تاکہ لگے بھی زخم تو اوچھا

    قصد کہ پھر جی بھر کے ستائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

    کالی گھٹائیں باغ میں جھولے دھانی دوپٹے لٹ جھٹکائے

    مجھ پہ یہ قدغن آپ نہ آئیں اف ری جوانی ہائے زمانے

    پچھلے پہر اٹھ اٹھ کے نمازیں ناک رگڑنی سجدوں پہ سجدے

    جو نہیں جائز اس کی دعائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

    شادؔ نہ وہ دیدار پرستی اور نہ وہ بے نشہ کی مستی

    تجھ کو کہاں سے ڈھونڈ کے لائیں اف ری جوانی ہائے زمانے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites