فراخ دست کا یہ حسن تنگ دستی ہے

غلام مرتضی راہی

فراخ دست کا یہ حسن تنگ دستی ہے

غلام مرتضی راہی

MORE BY غلام مرتضی راہی

    فراخ دست کا یہ حسن تنگ دستی ہے

    جو ایک بوند کی مانند بحر ہستی ہے

    وہ جس کو ناپئے تو ٹھہرتی نہیں ہے کہیں

    اسی زمین پہ کل کائنات بستی ہے

    گھٹا تو جھوم کے آتی ہے آئے دن لیکن

    جہاں برسنا ہو کم کم وہاں برستی ہے

    زمین کرتی ہے مجھ کو اشارۂ پرواز

    مری تمام بلندی رہین پستی ہے

    اب اور دیر نہ کر حشر برپا کرنے میں

    مری نظر ترے دیدار کو ترستی ہے

    جو گرد و پیش سے میں بے نیاز ہوں راہیؔ

    اسی میں ہوش ہے مرا اسی میں مستی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Rahi (Pg. 465)
    • Author : Ghulam Murtaza Rahi
    • مطبع : Educational Publishing House (2012)
    • اشاعت : 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY