فصیل جسم پہ شب خوں شرارتیں تیری

انجم عرفانی

فصیل جسم پہ شب خوں شرارتیں تیری

انجم عرفانی

MORE BYانجم عرفانی

    فصیل جسم پہ شب خوں شرارتیں تیری

    ذرا سی بھی نہیں بدلی ہیں عادتیں تیری

    یہ زخم زخم بدن اور لہو لہو یہ خواب

    کتاب جسم پہ اتری ہیں آیتیں تیری

    حصار آتش نمرود میں گھرا ہوں میں

    اب اتنی سست قدم کیوں ہیں رحمتیں تیری

    چراغ چاند شفق شام پھول جھیل صبا

    چرائیں سب نے ہی کچھ کچھ شباہتیں تیری

    یہ موج موج لہو میں ترے بدن کا نشہ

    تلاش کرتا ہے ہر لمحہ قربتیں تیری

    اے رشک سرو و صنوبر قداں خرام ناز

    کہ راہ دیکھ رہی ہیں قیامتیں تیری

    مری ہوس کے سمندر میں مد و جزر نہیں

    پئے زوال نہ ہوں چاند چاہتیں تیری

    اکھڑنے والی تھی جس دم طناب سانسوں کی

    در آئیں خیمۂ دل میں بشارتیں تیری

    اسے سنبھال، ہوا جا رہا ہے زیر و زبر

    کہ دل پہ لائی ہوئی سب ہیں آفتیں تیری

    ادا ہوا نہ کبھی مجھ سے ایک سجدۂ شکر

    میں کس زباں سے کروں گا شکایتیں تیری

    وہ آنکھوں آنکھوں میں راتوں کا کاٹنا تیرا

    وہ باتوں باتوں میں انجمؔ عبادتیں تیری

    مأخذ :
    • کتاب : libaas-e-zakhm (Pg. 48)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY