غم سے بکھرا نہ پائمال ہوا

حسن نعیم

غم سے بکھرا نہ پائمال ہوا

حسن نعیم

MORE BYحسن نعیم

    غم سے بکھرا نہ پائمال ہوا

    میں تو غم سے ہی بے مثال ہوا

    وقت گزرا تو موجۂ گل تھا

    وقت ٹھہرا تو ماہ و سال ہوا

    ہم گئے جس شجر کے سائے میں

    اس کے گرنے کا احتمال ہوا

    بس کہ وحشت تھی کار دنیا سے

    کچھ بھی حاصل نہ حسب حال ہوا

    سن کے ایران کے نئے قصے

    کچھ عجب صوفیوں کا حال ہوا

    جانے زنداں میں کیا کہا اس نے

    جس کا کل رات انتقال ہوا

    کس لیے ظلم ہے روا اس دم

    جس نے پوچھا وہ پائمال ہوا

    جس تعلق پہ فخر تھا مجھ کو

    وہ تعلق بھی اک وبال ہوا

    اے حسنؔ نیزۂ رفیقاں سے

    سر بچانا بھی اک کمال ہوا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    غم سے بکھرا نہ پائمال ہوا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY