گرمیٔ حسرت ناکام سے جل جاتے ہیں

قتیل شفائی

گرمیٔ حسرت ناکام سے جل جاتے ہیں

قتیل شفائی

MORE BYقتیل شفائی

    گرمیٔ حسرت ناکام سے جل جاتے ہیں

    ہم چراغوں کی طرح شام سے جل جاتے ہیں

    I burn up in the flames of unfulfilled desire

    like lanterns are, at eventide I am set afire

    شمع جس آگ میں جلتی ہے نمائش کے لیے

    ہم اسی آگ میں گمنام سے جل جاتے ہیں

    the fire,that the flame burns in, for all to see

    In that very fire I do burn but namelessly

    بچ نکلتے ہیں اگر آتش سیال سے ہم

    شعلۂ عارض گلفام سے جل جاتے ہیں

    If from the hunter's fire I manage to escape

    I perish in the fire that's in the flower's cape

    خود نمائی تو نہیں شیوۂ ارباب وفا

    جن کو جلنا ہو وہ آرام سے جل جاتے ہیں

    exhibition's not the norm for those that faithful be

    those who wish to perish then do so quietly

    ربط باہم پہ ہمیں کیا نہ کہیں گے دشمن

    آشنا جب ترے پیغام سے جل جاتے ہیں

    at our mutual fondness why will enemies not fret

    when even friends, at your messages, are all het

    جب بھی آتا ہے مرا نام ترے نام کے ساتھ

    جانے کیوں لوگ مرے نام سے جل جاتے ہیں

    whenever my name happens to be linked to thee

    I wonder why these people burn with jealousy

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    زاہدہ پروین

    زاہدہ پروین

    نسیم بیگم

    نسیم بیگم

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    گرمیٔ حسرت ناکام سے جل جاتے ہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY