غنچۂ دل کھلے جو چاہو تم

واجد علی شاہ اختر

غنچۂ دل کھلے جو چاہو تم

واجد علی شاہ اختر

MORE BYواجد علی شاہ اختر

    غنچۂ دل کھلے جو چاہو تم

    گلشن دہر میں صبا ہو تم

    بے مروت ہو بے وفا ہو تم

    اپنے مطلب کے آشنا ہو تم

    کون ہو کیا ہو کیا تمہیں لکھیں

    آدمی ہو پری ہو کیا ہو تم

    پستۂ لب سے ہم کو قوت دو

    دل بیمار کی دوا ہو تم

    ہم کو حاصل کسی کی الفت سے

    مطلب دل ہو مدعا ہو تم

    یہی عاشق کا پاس کرتے ہیں

    کیوں جی کیوں درپئے جفا ہو تم

    اسی اخترؔ کے تم ہوے معشوق

    ہنسو بولو اسی کو چاہو تم

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    غنچۂ دل کھلے جو چاہو تم نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY