ہوا ختم دریا تو صحرا لگا

عادل منصوری

ہوا ختم دریا تو صحرا لگا

عادل منصوری

MORE BYعادل منصوری

    ہوا ختم دریا تو صحرا لگا

    سفر کا تسلسل کہاں جا لگا

    عجب رات بستی کا نقشہ لگا

    ہر اک نقش اندر سے ٹوٹا لگا

    تمہارا ہزاروں سے رشتہ لگا

    کہو سائیں کا کام کیسا لگا

    ابھی کھنچ ہی جاتی لہو کی دھنک

    میاں تیر ٹک تیرا ترچھا لگا

    لہو میں اترتی رہی چاندنی

    بدن رات کا کتنا ٹھنڈا لگا

    تعجب کے سوراخ سے دیکھتے

    اندھیرے میں کیسے نشانہ لگا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے