اک ایسا وقت بھی صحرا میں آنے والا ہے

شہباز خواجہ

اک ایسا وقت بھی صحرا میں آنے والا ہے

شہباز خواجہ

MORE BYشہباز خواجہ

    اک ایسا وقت بھی صحرا میں آنے والا ہے

    کہ راستہ یہاں دریا بنانے والا ہے

    وہ تیرگی ہے کہ چھٹتی نہیں کسی صورت

    چراغ اب کے لہو سے جلانے والا ہے

    تمہارے ہاتھ سے ترشا ہوا وجود ہوں میں

    تمہی بتاؤ یہ رشتہ بھلانے والا ہے

    ابھی خیال ترے لمس تک نہیں پہنچا

    ابھی کچھ اور یہ منظر بنانے والا ہے

    بجھے بجھے سے خد و خال پر نہ جا شہبازؔ

    یہی افق ہے جو سورج اگانے والا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY