امتحاں ہم نے دیئے اس دار فانی میں بہت

منیر نیازی

امتحاں ہم نے دیئے اس دار فانی میں بہت

منیر نیازی

MORE BY منیر نیازی

    امتحاں ہم نے دیئے اس دار فانی میں بہت

    رنج کھینچے ہم نے اپنی لا مکانی میں بہت

    وہ نہیں اس سا تو ہے خواب بہار جاوداں

    اصل کی خوشبو اڑی ہے اس کے ثانی میں بہت

    رات دن کے آنے جانے میں یہ سونا جاگنا

    فکر والوں کو پتے ہیں اس نشانی میں بہت

    کوئلیں کوکیں بہت دیوار گلشن کی طرف

    چاند دمکا حوض کے شفاف پانی میں بہت

    اس کو کیا یادیں تھیں کیا اور کس جگہ پر رہ گئیں

    تیز ہے دریائے دل اپنی روانی میں بہت

    آج اس محفل میں تجھ کو بولتے دیکھا منیرؔ

    تو کہ جو مشہور تھا یوں بے زبانی میں بہت

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    امتحاں ہم نے دیئے اس دار فانی میں بہت نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites