اس ادا سے وہ جفا کرتے ہیں

داغؔ دہلوی

اس ادا سے وہ جفا کرتے ہیں

داغؔ دہلوی

MORE BY داغؔ دہلوی

    اس ادا سے وہ جفا کرتے ہیں

    کوئی جانے کہ وفا کرتے ہیں

    یوں وفا عہد وفا کرتے ہیں

    آپ کیا کہتے ہیں کیا کرتے ہیں

    ہم کو چھیڑوگے تو پچھتاؤگے

    ہنسنے والوں سے ہنسا کرتے ہیں

    نامہ بر تجھ کو سلیقہ ہی نہیں

    کام باتوں میں بنا کرتے ہیں

    چلئے عاشق کا جنازہ اٹھا

    آپ بیٹھے ہوئے کیا کرتے ہیں

    یہ بتاتا نہیں کوئی مجھ کو

    دل جو آتا ہے تو کیا کرتے ہیں

    حسن کا حق نہیں رہتا باقی

    ہر ادا میں وہ ادا کرتے ہیں

    تیر آخر بدل کافر ہے

    ہم اخیر آج دعا کرتے ہیں

    روتے ہیں غیر کا رونا پہروں

    یہ ہنسی مجھ سے ہنسا کرتے ہیں

    اس لیے دل کو لگا رکھا ہے

    اس میں محبوب رہا کرتے ہیں

    تم ملوگے نہ وہاں بھی ہم سے

    حشر سے پہلے گلہ کرتے ہیں

    جھانک کر روزن در سے مجھ کو

    کیا وہ شوخی سے حیا کرتے ہیں

    اس نے احسان جتا کر یہ کہا

    ''آپ کس منہ سے گلہ کرتے ہیں

    روز لیتے ہیں نیا دل دلبر

    نہیں معلوم یہ کیا کرتے ہیں

    داغؔ تو دیکھ تو کیا ہوتا ہے

    جبر پر صبر کیا کرتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites