جب بھی آتا ہے وہ میرے دھیان میں

جاذب قریشی

جب بھی آتا ہے وہ میرے دھیان میں

جاذب قریشی

MORE BYجاذب قریشی

    جب بھی آتا ہے وہ میرے دھیان میں

    پھول رکھ جاتا ہے روشن دان میں

    گھر کے بام و در نئے لگنے لگے

    حسن ایسا تھا مرے مہمان میں

    تیرا چہرہ آئنے کے سامنے

    اور آئینہ نئے امکان میں

    عکس تیرے تیری خوشبو تیرے رنگ

    بس یہی کچھ ہے مرے سامان میں

    جسم و جاں کو تازہ موسم مل گئے

    جل گیا میں تیرے آتش دان میں

    جو ستارہ پرورش پاتا رہا

    وہ ملا ہے پیار کے رجحان میں

    تتلیاں کمرے کے اندر آ گئیں

    ایک پھول ایسا بھی تھا گلدان میں

    آندھیوں میں بھی اڑاتا ہے مجھے

    کون ہے یہ میرے جسم و جان میں

    دھڑکنیں تیری ہیں بے آواز کیوں

    کیا نہیں ہوں میں ترے امکان میں

    جب درخت انگنائیوں کے کٹ گئے

    دھوپ اتر آئی ہے ہر دالان میں

    اجنبی خوابوں کا صورت گر ہوں میں

    اور میں گم ہوں تری پہچان میں

    مآخذ :
    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 398)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY