جو نگاہ ناز کا بسمل نہیں

مبارک عظیم آبادی

جو نگاہ ناز کا بسمل نہیں

مبارک عظیم آبادی

MORE BY مبارک عظیم آبادی

    جو نگاہ ناز کا بسمل نہیں

    دل نہیں وہ دل نہیں وہ دل نہیں

    بوتلیں خالی گئیں زیر عبا

    آج مے خانے میں مے فاضل نہیں

    میری دشواری ہے دشواری مری

    میری مشکل آپ کی مشکل نہیں

    کہہ رہی ہے ہر ادا قاتل تمہیں

    تم کہے جاؤ کہ ہم قاتل نہیں

    بہکی بہکی ہے مبارکؔ بات بات

    خیر تو ہے کیوں ٹھکانے دل نہیں

    مآخذ:

    • کتاب : intekhaab-e-kalaam (Pg. 22)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY