aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کب تک مہکے گی بے آس گلابوں میں

خاور اعجاز

کب تک مہکے گی بے آس گلابوں میں

خاور اعجاز

MORE BYخاور اعجاز

    کب تک مہکے گی بے آس گلابوں میں

    مر جائے گی خوشبو بند کتابوں میں

    کبھی درون ذات کے منظر تھے ان میں

    کنکر ہی کنکر ہیں اب تالابوں میں

    ہاتھ لگاتے ہی مٹی کا ڈھیر ہوئے

    کیسے کیسے رنگ بھرے تھے خوابوں میں

    گرتی جائے رشتوں کی مضبوط فصیل

    نخلستان بدلتا جائے سرابوں میں

    ذہنوں میں تشویش دلوں میں خوف بہت

    ساری بستی ہے محصور عذابوں میں

    آئی حسابوں میں جب دنیا کی تسخیر

    اک لمحہ غائب تھا سبھی حسابوں میں

    مأخذ :
    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 584)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (25Edition Nov. Dec. 1986)
    • اشاعت : 25Edition Nov. Dec. 1986

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے