کیسے ڈوبا ڈوب گیا

گوہر ہوشیارپوری

کیسے ڈوبا ڈوب گیا

گوہر ہوشیارپوری

MORE BYگوہر ہوشیارپوری

    کیسے ڈوبا ڈوب گیا

    ڈوبنے والا ڈوب گیا

    کیسی نیک کمائی تھی!

    پیسہ پیسہ ڈوب گیا

    ناؤ نہ ڈوبی دریا میں

    ناؤ میں دریا ڈوب گیا

    لوگ کنارے آن لگے

    اور کنارہ ڈوب گیا

    بارش اس نے بھیجی تھی

    شہر ہمارا ڈوب گیا

    ساری رات بتا ڈالی

    تارہ تارہ ڈوب گیا

    گوہرؔ پورا خواب سنا

    پانی میں کیا ڈوب گیا

    مأخذ :
    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 289)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23)
    • اشاعت : Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY