Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کمند حلقۂ گفتار توڑ دی میں نے

تنویر احمد علوی

کمند حلقۂ گفتار توڑ دی میں نے

تنویر احمد علوی

MORE BYتنویر احمد علوی

    کمند حلقۂ گفتار توڑ دی میں نے

    کہ مہر دست قلم کار توڑ دی میں نے

    روایتوں کو صلیبوں سے کر دیا آزاد

    یہی رسن تو سر دار توڑ دی میں نے

    یہ میرے ہاتھ ہیں اور بے شناخت اب بھی نہیں

    یہ اور بات ہے تلوار توڑ دی میں نے

    سفینے ہی کو میں شعلہ دکھا کے نکلا تھا

    جو اپنے ہاتھ سے پتوار توڑ دی میں نے

    تحکمانہ ادا اور فیصلے دل کے

    کمان ابروئے خمدار توڑ دی میں نے

    گرہ گرہ جو کہیں اور رشتہ رشتہ کہیں

    یہ رسم سبحہ و زنار توڑ دی میں نے

    وہ دائروں سے جو باہر نہ آ سکے تنویرؔ

    وہ رسم گردش پرکار توڑ دی میں نے

    مأخذ :
    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 185)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے