خودداریوں کے خون کو ارزاں نہ کر سکے

ساحر لدھیانوی

خودداریوں کے خون کو ارزاں نہ کر سکے

ساحر لدھیانوی

MORE BY ساحر لدھیانوی

    خودداریوں کے خون کو ارزاں نہ کر سکے

    ہم اپنے جوہروں کو نمایاں نہ کر سکے

    ہو کر خراب مے ترے غم تو بھلا دیے

    لیکن غم حیات کا درماں نہ کر سکے

    ٹوٹا طلسم عہد محبت کچھ اس طرح

    پھر آرزو کی شمع فروزاں نہ کر سکے

    ہر شے قریب آ کے کشش اپنی کھو گئی

    وہ بھی علاج شوق گریزاں نہ کر سکے

    کس درجہ دل شکن تھے محبت کے حادثے

    ہم زندگی میں پھر کوئی ارماں نہ کر سکے

    مایوسیوں نے چھین لیے دل کے ولولے

    وہ بھی نشاط روح کا ساماں نہ کر سکے

    مآخذ:

    • Book : Kulliyat-e-Sahir (Pg. 36)
    • Author : Sahir Ludhyanwi
    • مطبع : Farid Book Depot (pvt.) Ltd. New Delhi

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY