کھلنے ہی لگے ان پر اسرار شباب آخر

واصف دہلوی

کھلنے ہی لگے ان پر اسرار شباب آخر

واصف دہلوی

MORE BYواصف دہلوی

    کھلنے ہی لگے ان پر اسرار شباب آخر

    آنے ہی لگا ہم سے اب ان کو حجاب آخر

    تعمیل کتاب اول تاویل کتاب آخر

    تدبیر و عمل اول تقریر و خطاب آخر

    اس خاک کے پتلے کی کیا خوب کہانی ہے

    مسجود ملک اول رسوا و خراب آخر

    گو خود وہ نہیں کرتے بخشش میں حساب اول

    دینا ہے مگر ہم کو اک روز حساب آخر

    دیدار سے پہلے ہی کیا حال ہوا دل کا

    کیا ہوگا جو الٹیں گے وہ رخ سے نقاب آخر

    محروم نے رہ جانا کوتاہی ہمت سے

    ہونے کو ہے اے واصفؔ یہ بزم شراب آخر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کھلنے ہی لگے ان پر اسرار شباب آخر نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY