aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کیوں دل ترے خیال کا حامل نہیں رہا

ساغر خیامی

کیوں دل ترے خیال کا حامل نہیں رہا

ساغر خیامی

MORE BYساغر خیامی

    کیوں دل ترے خیال کا حامل نہیں رہا

    یہ آئینہ بھی دید کے قابل نہیں رہا

    صحرا نوردیوں میں گزاری ہے زندگی

    اب مجھ کو خوف دورئ منزل نہیں رہا

    ارباب رنگ و بو کی نظر میں خدا گواہ

    کب احترام کوچۂ قاتل نہیں رہا

    زنداں میں خامشی ہے کوئی بولتا نہیں

    حد ہو گئی کہ شور سلاسل نہیں رہا

    مانوس اس قدر ہوئے دریا کی موج سے

    ساحل بھی اعتبار کے قابل نہیں رہا

    اس وقت مجھ کو دعوت جام و سبو ملی

    جس وقت میں گناہ کے قابل نہیں رہا

    مأخذ:

    Kulliyat-e-Saghar Khayyami (Pg. 479)

    • مصنف: Saghar Khayyami
      • اشاعت: 2012
      • ناشر: Farid Book Depot (Pvt.) Ltd.
      • سن اشاعت: 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے