Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

لب فرات کہاں ہم قیام کرتے ہیں

عابدہ کرامت

لب فرات کہاں ہم قیام کرتے ہیں

عابدہ کرامت

MORE BYعابدہ کرامت

    لب فرات کہاں ہم قیام کرتے ہیں

    کہ ہم تو تشنہ لبی کو سلام کرتے ہیں

    چڑھائیں کس لئے پتھر پہ پھول کی چادر

    بریدہ لاشوں کا جو احترام کرتے ہیں

    وہی اسیر ہلاتے ہیں کج کلاہی کو

    کہ ہر نفس کو جو زندان شام کرتے ہیں

    وہ آ رہا ہے اگر آندھیاں جلو میں لیے

    دیوں کا ہم بھی چلو اہتمام کرتے ہیں

    وہیں پہ جھاڑ کے اٹھتے ہیں پھر متاع حیات

    کہ زندگی کو جہاں جس کے نام کرتے ہیں

    سرور اور ہی ہوتا ہے خود کلامی کا

    ہم اپنے آپ سے اکثر کلام کرتے ہیں

    مأخذ:

    بچھڑی ساعتیں (Pg. 49)

    • مصنف: عابدہ کرامت
      • ناشر: ویلکم بک پورٹ (پرئیویٹ) لمیٹڈ، کراچی
      • سن اشاعت: 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے