موت سے زیست کی تکمیل نہیں ہو سکتی

نجیب احمد

موت سے زیست کی تکمیل نہیں ہو سکتی

نجیب احمد

MORE BYنجیب احمد

    موت سے زیست کی تکمیل نہیں ہو سکتی

    روشنی خاک میں تحلیل نہیں ہو سکتی

    موم ہو جاؤں کہ پتھر سے خدا ہو جاؤں

    کسی صورت مری تکمیل نہیں ہو سکتی

    کس لیے سانس کی زنجیر سے باندھا ہے مجھے

    اور کچھ صورت تذلیل نہیں ہو سکتی

    کس لیے زندہ ہوں میں کس کے لیے زندہ ہوں

    جرم ایسا ہے کہ تاویل نہیں ہو سکتی

    ان اندھیروں میں لہو رنگ سویروں کی نجیبؔ

    کیا فروزاں کوئی قندیل نہیں ہو سکتی

    مأخذ :
    • کتاب : Ibaraten (Pg. 33)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY