میرا سر کب کسی دربار میں خم ہوتا ہے

کمال احمد صدیقی

میرا سر کب کسی دربار میں خم ہوتا ہے

کمال احمد صدیقی

MORE BYکمال احمد صدیقی

    میرا سر کب کسی دربار میں خم ہوتا ہے

    کوچۂ یار میں لیکن یہ قدم ہوتا ہے

    پرسش حال بھی اتنی کہ میں کچھ کہہ نہ سکوں

    اس تکلف سے کرم ہو تو ستم ہوتا ہے

    شیخ مے خانہ میں کرتا ہے ارم کی باتیں

    اسی مے خانہ کا اک گوشہ ارم ہوتا ہے

    ایک دل ہے کہ اجڑ جائے تو بستا ہی نہیں

    ایک بت خانہ ہے اجڑے تو حرم ہوتا ہے

    راہ بر راہ نوردی سے پریشاں ہے کمالؔ

    جس طرف جائے مرا نقش قدم ہوتا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Aazadi ke baad dehli men urdu gazal (Pg. 300)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY