مرا اکیلا خدا یاد آ رہا ہے مجھے

ساقی فاروقی

مرا اکیلا خدا یاد آ رہا ہے مجھے

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    مرا اکیلا خدا یاد آ رہا ہے مجھے

    یہ سوچتا ہوا گرجا بلا رہا ہے مجھے

    مجھے خبر ہے کہ اک مشت خاک ہوں پھر بھی

    تو کیا سمجھ کے ہوا میں اڑا رہا ہے مجھے

    یہ کیا طلسم ہے کیوں رات بھر سسکتا ہوں

    وہ کون ہے جو دیوں میں جلا رہا ہے مجھے

    اسی کا دھیان ہے اور پیاس بڑھتی جاتی ہے

    وہ اک سراب کہ صحرا بنا رہا ہے مجھے

    میں آنسوؤں میں نہایا ہوا کھڑا ہوں ابھی

    جنم جنم کا اندھیرا بلا رہا ہے مجھے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    مرا اکیلا خدا یاد آ رہا ہے مجھے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY