مری روح میں جو اتر سکیں وہ محبتیں مجھے چاہئیں

اعتبار ساجد

مری روح میں جو اتر سکیں وہ محبتیں مجھے چاہئیں

اعتبار ساجد

MORE BYاعتبار ساجد

    مری روح میں جو اتر سکیں وہ محبتیں مجھے چاہئیں

    جو سراب ہوں نہ عذاب ہوں وہ رفاقتیں مجھے چاہئیں

    انہیں ساعتوں کی تلاش ہے جو کیلنڈروں سے اتر گئیں

    جو سمے کے ساتھ گزر گئیں وہی فرصتیں مجھے چاہئیں

    کہیں مل سکیں تو سمیٹ لا مرے روز و شب کی کہانیاں

    جو غبار وقت میں چھپ گئیں وہ حکایتیں مجھے چاہئیں

    جو مری شبوں کے چراغ تھے جو مری امید کے باغ تھے

    وہی لوگ ہیں مری آرزو وہی صورتیں مجھے چاہئیں

    تری قربتیں نہیں چاہئیں مری شاعری کے مزاج کو

    مجھے فاصلوں سے دوام دے تری فرقتیں مجھے چاہئیں

    مجھے اور کچھ نہیں چاہئے یہ دعائیں ہیں مرے سائباں

    کڑی دھوپ میں کہیں مل سکیں تو یہی چھتیں مجھے چاہئیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY