مجھے وہ کنج تنہائی سے آخر کب نکالے گا

اعتبار ساجد

مجھے وہ کنج تنہائی سے آخر کب نکالے گا

اعتبار ساجد

MORE BYاعتبار ساجد

    مجھے وہ کنج تنہائی سے آخر کب نکالے گا

    اکیلے پن کا یہ احساس مجھ کو مار ڈالے گا

    کسی کو کیا پڑی ہے میری خاطر خود کو زحمت دے

    پریشاں ہیں سبھی کیسے کوئی مجھ کو سنبھالے گا

    ابھی تاریخ نامی ایک جادوگر کو آنا ہے

    جو زندہ شہر اور اجسام کو پتھر میں ڈھالے گا

    بس اگلے موڑ پر منزل تری آنے ہی والی ہے

    مرے اے ہم سفر تو کتنا میرا دکھ بٹا لے گا

    شریک رنج کیا کرنا اسے تکلیف کیا دینی

    کہ جتنی دیر بیٹھے گا وہی باتیں نکالے گا

    رہا کر دے قفس کی قید سے گھایل پرندے کو

    کسی کے درد کو اس دل میں کتنے سال پالے گا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY