نارسائی ہے کہ تو ہے کیا ہے

خالد شریف

نارسائی ہے کہ تو ہے کیا ہے

خالد شریف

MORE BYخالد شریف

    نارسائی ہے کہ تو ہے کیا ہے

    یاد کر کے جسے جی ڈوبا ہے

    اے غم جاں ترے غم خواروں کا

    صبر اب حد سے سوا پہنچا ہے

    آئینہ تھا کہ مرا پیکر تھا

    تیری باتوں سے ابھی بکھرا ہے

    آنکھ کس لفظ پہ بھر آئی ہے

    کون سی بات پہ دل ٹوٹا ہے

    مرے ہاتھوں کی لکیروں میں کوئی

    زندگی بن کے چھپا بیٹھا ہے

    آسماں جھانک رہا ہے خالدؔ

    چاند کمرے میں مرے اترا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY