ناکام حسرتوں کے سوا کچھ نہیں رہا

خالد شریف

ناکام حسرتوں کے سوا کچھ نہیں رہا

خالد شریف

MORE BYخالد شریف

    ناکام حسرتوں کے سوا کچھ نہیں رہا

    دنیا میں اب دکھوں کے سوا کچھ نہیں رہا

    اک عمر ہو گئی ہے کہ دل کی کتاب میں

    کچھ خشک پتیوں کے سوا کچھ نہیں رہا

    یادیں کچھ اس طرح سے سماعت پہ چھا گئیں

    پچھلی رفاقتوں کے سوا کچھ نہیں رہا

    لب سی لیے تو اپنے ہی کمرے میں یوں لگا

    خاموش آئنوں کے سوا کچھ نہیں رہا

    جذبے تمام کھو گئے لمحوں کی دھول میں

    اب دل میں دھڑکنوں کے سوا کچھ نہیں رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے