نئی دنیا مجسم دل کشی معلوم ہوتی ہے

نشور واحدی

نئی دنیا مجسم دل کشی معلوم ہوتی ہے

نشور واحدی

MORE BY نشور واحدی

    نئی دنیا مجسم دل کشی معلوم ہوتی ہے

    مگر اس حسن میں دل کی کمی معلوم ہوتی ہے

    حجابوں میں نسیم زندگی معلوم ہوتی ہے

    کسی دامن کی ہلکی تھرتھری معلوم ہوتی ہے

    مری راتوں کی خنکی ہے ترے گیسوئے پر خم میں

    یہ بڑھتی چھاؤں بھی کتنی گھنی معلوم ہوتی ہے

    وہ اچھا تھا جو بیڑا موج کے رحم و کرم پر تھا

    خضر آئے تو کشتی ڈوبتی معلوم ہوتی ہے

    یہ دل کی تشنگی ہے یا نظر کی پیاس ہے ساقی

    ہر اک بوتل جو خالی ہے بھری معلوم ہوتی ہے

    دم آخر مداوائے دل بیمار کیا معنی

    مجھے چھوڑو کہ مجھ کو نیند سی معلوم ہوتی ہے

    دیا خاموش ہے لیکن کسی کا دل تو جلتا ہے

    چلے آؤ جہاں تک روشنی معلوم ہوتی ہے

    نسیم زندگی کے سوز سے مرجھائی جاتی ہے

    یہ ہستی پھول کی اک پنکھڑی معلوم ہوتی ہے

    جدھر دیکھا نشورؔ اک عالم دیگر نظر آیا

    مصیبت میں یہ دنیا اجنبی معلوم ہوتی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نئی دنیا مجسم دل کشی معلوم ہوتی ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY