aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

پیغام زندگی نے دیا موت کا مجھے

صفی لکھنوی

پیغام زندگی نے دیا موت کا مجھے

صفی لکھنوی

MORE BYصفی لکھنوی

    پیغام زندگی نے دیا موت کا مجھے

    مرنے کے انتظار میں جینا پڑا مجھے

    اس انقلاب کی بھی کوئی حد ہے دوستو

    نا آشنا سمجھتے ہیں اب آشنا مجھے

    کشتی پہنچ سکے گی یہ تا ساحل مراد

    دھوکا نہ دے خدا کے لیے نا خدا مجھے

    وہ طول عمر جس میں نہ ہو لطف زندگی

    مل جائے مثل خضر تو کیا فائدہ مجھے

    دوں تیرا ساتھ عمر رواں کس طریق سے

    آنکھیں دکھا رہے ہیں ترے نقش پا مجھے

    تخلیق کائنات کو سوچا کیا مگر

    کچھ ابتدا ملی نہ صفیؔ انتہا مجھے

    مأخذ:

    Rooh-e-Ghazal,Pachas Sala Intekhab (Pg. 108)

      • اشاعت: 1993
      • ناشر: انجمن روح ادب، الہ آباد
      • سن اشاعت: 1993

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے