پیروں کو مرے دیدۂ تر باندھے ہوئے ہے

منور رانا

پیروں کو مرے دیدۂ تر باندھے ہوئے ہے

منور رانا

MORE BY منور رانا

    پیروں کو مرے دیدۂ تر باندھے ہوئے ہے

    زنجیر کی صورت مجھے گھر باندھے ہوئے ہے

    ہر چہرے میں آتا ہے نظر ایک ہی چہرا

    لگتا ہے کوئی میری نظر باندھے ہوئے ہے

    بچھڑیں گے تو مر جائیں گے ہم دونوں بچھڑ کر

    اک ڈور میں ہم کو یہی ڈر باندھے ہوئے ہے

    پرواز کی طاقت بھی نہیں باقی ہے لیکن

    صیاد ابھی تک مرے پر باندھے ہوئے ہے

    ہم ہیں کہ کبھی ضبط کا دامن نہیں چھوڑا

    دل ہے کہ دھڑکنے پہ کمر باندھے ہوئے ہے

    آنکھیں تو اسے گھر سے نکلنے نہیں دیتیں

    آنسو ہے کہ سامان سفر باندھے ہوئے ہے

    پھینکی نہ منورؔ نے بزرگوں کی نشانی

    دستار پرانی ہے مگر باندھے ہوئے ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY