پھر کسی خواب کے پردے سے پکارا جاؤں

عادل منصوری

پھر کسی خواب کے پردے سے پکارا جاؤں

عادل منصوری

MORE BYعادل منصوری

    پھر کسی خواب کے پردے سے پکارا جاؤں

    پھر کسی یاد کی تلوار سے مارا جاؤں

    پھر کوئی وسعت آفاق پہ سایہ ڈالے

    پھر کسی آنکھ کے نقطے میں اتارا جاؤں

    دن کے ہنگاموں میں دامن کہیں میلا ہو جائے

    رات کی نقرئی آتش میں نکھارا جاؤں

    خشک کھوئے ہوئے گمنام جزیرے کی طرح

    درد کے کالے سمندر سے ابھارا جاؤں

    اپنی کھوئی ہوئی جنت کا طلب گار بنوں

    دست یزداں سے گنہ گار سنوارا جاؤں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    پھر کسی خواب کے پردے سے پکارا جاؤں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے