رات باغیچے پہ تھی اور روشنی پتھر میں تھی

ثروت حسین

رات باغیچے پہ تھی اور روشنی پتھر میں تھی

ثروت حسین

MORE BY ثروت حسین

    رات باغیچے پہ تھی اور روشنی پتھر میں تھی

    اک صحیفے کی تلاوت ذہن پیغمبر میں تھی

    آدمی کی بند مٹھی میں ستارہ تھا کوئی

    ایک جادوئی کہانی صبح کے منتر میں تھی

    ایک رخش سنگ تھا آتش کدے کے سامنے

    ایک نیلی موم بتی دست آہن گر میں تھی

    بیچ میں سوئی ہوئی تھی آتش آیندگاں

    ایک پیراہن کی ٹھنڈک دھوپ کی چادر میں تھی

    پاؤں ساکت ہو گئے ثروتؔ کسی کو دیکھ کر

    اک کشش مہتاب جیسی چہرۂ دل بر میں تھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY