رہ خزاں میں تلاش بہار کرتے رہے

فیض احمد فیض

رہ خزاں میں تلاش بہار کرتے رہے

فیض احمد فیض

MORE BYفیض احمد فیض

    دلچسپ معلومات

    جناح ہسپتال ،کراچی۔21اگست1953

    رہ خزاں میں تلاش بہار کرتے رہے

    شب سیہ سے طلب حسن یار کرتے رہے

    خیال یار کبھی ذکر یار کرتے رہے

    اسی متاع پہ ہم روزگار کرتے رہے

    نہیں شکایت ہجراں کہ اس وسیلے سے

    ہم ان سے رشتۂ دل استوار کرتے رہے

    وہ دن کہ کوئی بھی جب وجہ انتظار نہ تھی

    ہم ان میں تیرا سوا انتظار کرتے رہے

    ہم اپنے راز پہ نازاں تھے شرمسار نہ تھے

    ہر ایک سے سخن راز دار کرتے رہے

    ضیائے بزم جہاں بار بار ماند ہوئی

    حدیث شعلہ رخاں بار بار کرتے رہے

    انہیں کے فیض سے بازار عقل روشن ہے

    جو گاہ گاہ جنوں اختیار کرتے رہے

    RECITATIONS

    فیض احمد فیض

    فیض احمد فیض

    فیض احمد فیض

    رہ خزاں میں تلاش بہار کرتے رہے فیض احمد فیض

    مأخذ :
    • کتاب : Nuskha Hai Wafa (Pg. 246)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY