aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

روشنی سے کس طرح پردا کریں گے

فرخ جعفری

روشنی سے کس طرح پردا کریں گے

فرخ جعفری

MORE BYفرخ جعفری

    روشنی سے کس طرح پردا کریں گے

    آخر شب سوچتے ہیں کیا کریں گے

    وہ سنہری دھوپ اب چھت پر نہیں ہے

    ہم بھی آئینے کو اب اندھا کریں گے

    جسم کے اندر جو سورج تپ رہا ہے

    خون بن جائے تو پھر ٹھنڈا کریں گے

    گھر سے وہ نکلے تو بس اسٹینڈ تک ہی

    اس کا سایہ بن کے ہم پیچھا کریں گے

    آنکھ پتھرا جائے گی یہ جانتے ہیں

    پھر بھی اس منظر میں ہم کھویا کریں گے

    مأخذ:

    shab khuun (48) (rekhta website) (Pg. 59)

      • اشاعت: 1970
      • سن اشاعت: 1970

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے