رشتے سے محافظ کا خطرہ جو نکل جاتا

زہرا نگاہ

رشتے سے محافظ کا خطرہ جو نکل جاتا

زہرا نگاہ

MORE BYزہرا نگاہ

    رشتے سے محافظ کا خطرہ جو نکل جاتا

    منزل پہ بھی آ جاتے نقشہ بھی بدل جاتا

    اس جھوٹ کی دلدل سے باہر بھی نکل آتے

    دنیا میں بھی سر اٹھتا اور گھر بھی سنبھل جاتا

    ہنستے ہوئے بوڑھوں کو قصے کئی یاد آتے

    روتے ہوئے بچوں کا رونا بھی بہل جاتا

    کیوں اپنے پہاڑوں کے سینوں کو جلاتے ہم

    خطرہ تو محبت کے اک پھول سے ٹل جاتا

    اس شہر کو راس آئی ہم جیسوں کی گم نامی

    ہم نام بتاتے تو یہ شہر بھی جل جاتا

    وہ ساتھ نہ دیتا تو وہ داد نہ دیتا تو

    یہ لکھنے لکھانے کا جو بھی ہے خلل جاتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY