سارا عالم گوش بر آواز ہے

اسرار الحق مجاز

سارا عالم گوش بر آواز ہے

اسرار الحق مجاز

MORE BYاسرار الحق مجاز

    سارا عالم گوش بر آواز ہے

    آج کن ہاتھوں میں دل کا ساز ہے

    تو جہاں ہے زمزمہ پرداز ہے

    دل جہاں ہے گوش بر آواز ہے

    ہاں ذرا جرأت دکھا اے جذب دل

    حسن کو پردے پہ اپنے ناز ہے

    ہم نشیں دل کی حقیقت کیا کہوں

    سوز میں ڈوبا ہوا اک ساز ہے

    آپ کی مخمور آنکھوں کی قسم

    میری مے خواری ابھی تک راز ہے

    ہنس دیے وہ میرے رونے پر مگر

    ان کے ہنس دینے میں بھی اک راز ہے

    چھپ گئے وہ ساز ہستی چھیڑ کر

    اب تو بس آواز ہی آواز ہے

    حسن کو ناحق پشیماں کر دیا

    اے جنوں یہ بھی کوئی انداز ہے

    ساری محفل جس پہ جھوم اٹھی مجازؔ

    وہ تو آواز شکست ساز ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سارا عالم گوش بر آواز ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY