سب لوگ لیے سنگ ملامت نکل آئے

احمد فراز

سب لوگ لیے سنگ ملامت نکل آئے

احمد فراز

MORE BYاحمد فراز

    سب لوگ لیے سنگ ملامت نکل آئے

    کس شہر میں ہم اہل محبت نکل آئے

    اب دل کی تمنا ہے تو اے کاش یہی ہو

    آنسو کی جگہ آنکھ سے حسرت نکل آئے

    ہر گھر کا دیا گل نہ کرو تم کہ نہ جانے

    کس بام سے خورشید قیامت نکل آئے

    جو درپئے پندار ہیں ان قتل گہوں سے

    جاں دے کے بھی سمجھو کہ سلامت نکل آئے

    اے ہم نفسو کچھ تو کہو عہد ستم کی

    اک حرف سے ممکن ہے حکایت نکل آئے

    یارو مجھے مصلوب کرو تم کہ مرے بعد

    شاید کہ تمہارا قد و قامت نکل آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY