شام سے ہم تا سحر چلتے رہے

بلقیس ظفیر الحسن

شام سے ہم تا سحر چلتے رہے

بلقیس ظفیر الحسن

MORE BYبلقیس ظفیر الحسن

    شام سے ہم تا سحر چلتے رہے

    چور تھے تھک کر مگر چلتے رہے

    سنگ ہو جاتے جو مڑ کر دیکھتے

    انگلیاں کانوں میں دھر چلتے رہے

    آسماں تھا آگ پتھر تھی زمیں

    تھی کہاں جائے مفر چلتے رہے

    روز ڈوبے روز ابھرے ہم مگر

    صورت شمس و قمر چلتے رہے

    سنگ باری یوں تو ہم پر بھی ہوئی

    ہم ڈھکے ہاتھوں سے سر چلتے رہے

    در بدر کی خاک تھی تقدیر میں

    ہم لیے کاندھوں پہ گھر چلتے رہے

    ہم بھی ہیں بلقیسؔ مجروحین میں

    ہم پہ بھی تیر و تبر چلتے رہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے