تکلم جو کوئی کرتا ہے فانی

گویا فقیر محمد

تکلم جو کوئی کرتا ہے فانی

گویا فقیر محمد

MORE BYگویا فقیر محمد

    تکلم جو کوئی کرتا ہے فانی

    ہماری اور تمہاری ہے کہانی

    جنوں میں یاد ہے اک بیت ابرو

    کہاں ہے اب دماغ شعر خوانی

    مآل عاشق و معشوق ہے ایک

    سنا ہے شمع سوزاں کی زبانی

    نشاں ہم بے نشانوں کا نہ پایا

    صبا نے مدتوں تک خاک چھانی

    وہ عاشق ہوں نہ آئے نیند مجھ کو

    سنوں جب تک نہ یوسف کی کہانی

    نہیں بچتا ہے بیمار محبت

    سنا ہے ہم نے گویاؔ کی زبانی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY