اجلے میلے پیش ہوئے

گوہر ہوشیارپوری

اجلے میلے پیش ہوئے

گوہر ہوشیارپوری

MORE BYگوہر ہوشیارپوری

    اجلے میلے پیش ہوئے

    جیسے ہم تھے پیش ہوئے

    آیا کون کٹہروں میں

    ساتھ کٹہرے پیش ہوئے

    اپنے سارے جھوٹ کھلے

    کس کے آگے پیش ہوئے

    اندازے جب ہار گئے

    پھر مفروضے پیش ہوئے

    شاہ کو شاید مات ہوئی

    شاہ کے مہرے پیش ہوئے

    عدل کا چشمہ سوکھ گیا

    عدل کے پیاسے پیش ہوئے

    ہم بھی شاید صاف نہ تھے

    ڈرتے ڈرتے پیش ہوئے

    لطف تو اس دن آئے گا

    جس دن کھاتے پیش ہوئے

    گوہرؔ کیا تعزیر لگی

    باقی پرچے پیش ہوئے

    مأخذ :
    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 289)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23)
    • اشاعت : Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY