وہ بے نیاز مجھے الجھنوں میں ڈال گیا

احمد راہی

وہ بے نیاز مجھے الجھنوں میں ڈال گیا

احمد راہی

MORE BYاحمد راہی

    وہ بے نیاز مجھے الجھنوں میں ڈال گیا

    کہ جس کے پیار میں احساس ماہ و سال گیا

    ہر ایک بات کے یوں تو دیے جواب اس نے

    جو خاص بات تھی ہر بار ہنس کے ٹال گیا

    کئی سوال تھے جو میں نے سوچ رکھے تھے

    وہ آ گیا تو مجھے بھول ہر سوال گیا

    جو عمر جذبوں کا سیلاب بن کے آئی تھی

    گزر گئی تو لگا دور اعتدال گیا

    وہ ایک ذات جو خواب و خیال لائی تھی

    اسی کے ساتھ ہر اک خواب ہر خیال گیا

    اسے تو اس کا کوئی رنج بھی نہ ہو شاید

    کہ اس کی بزم سے کوئی شکستہ حال گیا

    مأخذ :
    • کتاب : Rag-e-jan (Pg. 125)
    • Author : Ahmad Rahi
    • مطبع : Al-Hamd Publication (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY