یقین برسوں کا امکان کچھ دنوں کا ہوں

اطہر ناسک

یقین برسوں کا امکان کچھ دنوں کا ہوں

اطہر ناسک

MORE BYاطہر ناسک

    یقین برسوں کا امکان کچھ دنوں کا ہوں

    میں تیرے شہر میں مہمان کچھ دنوں کا ہوں

    پھر اس کے بعد مجھے حرف حرف ہونا ہے

    تمہارے ہاتھ میں دیوان کچھ دنوں کا ہوں

    کسی بھی دن اسے سر سے اتار پھینکوں گا

    میں خود پہ بوجھ مری جان کچھ دنوں کا ہوں

    زمین زادے مری عمر کا حساب نہ کر

    اٹھا کے دیکھ لے میزان کچھ دنوں کا ہوں

    مجھے یہ دکھ ہے کہ حشرات غم تمہارے لئے

    میں خورد و نوش کا سامان کچھ دنوں کا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے