aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

یہ ریت قیس کے نقش قدم پہ چلتی رہی

عدنان محسن

یہ ریت قیس کے نقش قدم پہ چلتی رہی

عدنان محسن

MORE BYعدنان محسن

    یہ ریت قیس کے نقش قدم پہ چلتی رہی

    سمندروں کے خد و خال کو بدلتی رہی

    کسی کے قدموں سے رستے لپٹ کے رویا کیے

    کسی کی موت پہ خود موت ہاتھ ملتی رہی

    اسے کنارے کا کنکر سمجھ کے پاؤں نہ رکھ

    یہ آرزو میرے دل کے صدف میں پلتی رہی

    غرور تشنہ دہانی تری بقا کی قسم

    ندی ہمارے لبوں کی طرف اچھلتی رہی

    جمی تھی برف رویوں کی سرخ آنکھوں پر

    درون جسم کوئی آگ تھی مچلتی رہی

    تماش گاہ زمانہ میں زندگی اپنی

    سنبھل کے گرتی رہی گر کے پھر سنبھلتی رہی

    یہ کون آئنہ پیکر یہاں سے گزرا ہے

    کہ جس کی گرد سفر پر نظر پھسلتی رہی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے