یہ تو سچ ہے کہ صفیؔ کی نہیں نیت اچھی

صفی اورنگ آبادی

یہ تو سچ ہے کہ صفیؔ کی نہیں نیت اچھی

صفی اورنگ آبادی

MORE BYصفی اورنگ آبادی

    یہ تو سچ ہے کہ صفیؔ کی نہیں نیت اچھی

    ہاں مگر پائی ہے ظالم نے طبیعت اچھی

    کیا ہوا آپ نے پائی ہے جو صورت اچھی

    آدمی وہ ہے کہ جس کی ہو طبیعت اچھی

    آج وہ پوچھنے آئے ہیں ہمارا مطلب

    سن لیا تھا کہیں مطلب کی محبت اچھی

    خوب صورت ہے وہی جس پہ زمانہ ریجھے

    یوں تو ہر ایک کو ہے اپنی ہی صورت اچھی

    کچھ بھی ہو ایک تمنا تو بندھی رہتی ہے

    تجھ سے سو درجہ ترے ملنے کی حسرت اچھی

    نہیں اپنے میں کوئی چاہنے والا تیرا

    ڈال دی ڈالنے والوں نے عداوت اچھی

    کوئی ارمان نہیں ہے تو فقط بیتابی

    وصل سے تیرے ستم گر تری فرقت اچھی

    ان کے آتے ہی بدل جاتے ہیں تیرے تیور

    اے صفیؔ چاہیے انسان کی نیت اچھی

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Safi (Pg. 231)
    • Author : Safi Auranjabadi
    • مطبع : Urdu Acadami Hayderabad (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY